August 11, 2011 - علی شیراز
تبصرہ کریں

نجمہ عثما ن کے شعر ی مجمو عے (کڑ ے مو سمو ں کی ز د پر) ایک نظر

نجمہ عثما ن کے شعر ی مجمو عے   (کڑ ے مو سمو ں کی ز د پر) ایک نظر 
ا نسا ن کو قد ر ت کی طرف سے جو عقلی عطیے عطا ہو ے  ہیں ا ن میں حا فظے کو  بڑ ی ا ہمیت حا صل ہے ۔  حا فظہ یا دوں کا محا  فظ ہو تا ہے اوریا د یں اردو شا عر ی کا اہم مو ضو ع ر ہی ہیں ۔ کم و بیش ہر شا عر نے یادوں میں پنا ہ لی ہے اور  یا د  یں بھی ایسی جو ترش بھی ہیں اور شیر یں
بھی ، ملال انگیز بھی ہیں اور سرور آمیز بھی ، نو کیلی بھی اور زہر یلی بھی الغر ض انسان حا ل کی ظلمتو ں کو ما ضی کے پر مسر ت لمحا ت کی یا دوں سے ہی منور کر سکتا ہے ۔ نجمہ عثما ن نے بھی اردو شا عری کی اس د یر ینہ روایت کو نہیں توڑا  اور یا دوں کو اسطرح پیش کیا ہے۔
ابھر رہے ہیں کسی یا د کے نئے منظر                           
ا تر ر ہی ہے پر ا نی بہا ر آ نگن میں
جل ا ٹھا مہتا ب سو ر ج کی طر ح                         
   یو ں چلی کل را ت یا دوں کی ہو ا
ہوا نے جیسے سسکی لی، رویا کو ئی              
 کس نے کھو لے یا د در یچے آ نگن میں
نجمہ عثما ن  پر د یس میں د یس کی شا عر ہ  ہیں ۔ ا یک ا یسی شا عر ہ جن کے ا شعا ر د یس کی مٹی سےمعطر ا و ر آ نگن کی مہک سے معمو ر ہیں ۔ و طن کی محبت ا یک فطر ی ا مر  ہے ۔ آ دمی جہا ں پیدا ہو تا ہے، جہا ں ہو ش سنبھا لتا  ہے ا و ر پر و ر ش پا تا ہے، و ہا ں کی مٹی سے ا سے
خا ص ا لفت ہو جا تی ہے ۔ وہ گھر ، وہ گلیا ں، وہ آ نگن، و ہ کھیت، وہ فضا، وہ با بل کا آ نگن، سکھیا ں ا و ر عز یز و ا قا رب، ہر شے ا و ر شخص آ د می کے ذ ھن پر ا پنے ا ثر ا ت ثبت کر تے ہیں ۔ نجمہ عثما ن نے بھی ا پنا و طن تو چھو ڑا مگر و طن نے ا ن کو نہ چھو ڑا  ا و ر وطن سے دوری اور غر یب ا لو طنی کا یہ د کھ ا ن کے شعر و ں میں ا سطر ح بیا ن ہو ا ۔
جسم ہجر ت میں ر ہا ا و ر میر ے پا ؤ ں                     
د یس کی مٹی سے لپٹے ر ہ گئے
بے و طن ہوں ا و ر در بد ر ہو ں            
مگر دل میں تصو یر با م و در کی ہے
نجمہ عثما ن  نے ا پنی شا عر ی میں حقیقت پسند ی سے کا م لیا ہے ا و ر ز ند گی کی  کھر د ر ی حقیقتو ں کو ر ند ہ لگا ے بغیر ا پنی شا عر ی  میں ا سطر ح پیش کیا ہے ۔
جب سے سچ کا پیٹر پھل د ینے لگا                                         
میرا آ نگن  پتھر و ں  سے بھر گیا
و قت کے ہا تھو ں میں دے کر آ  ئینہ    
اس نے  ا پنے با ل چا ند ی کر لئے
شا عر ی مصو ر ی ہے ا و ر شا عر لفظو ں کی ا یما یت  ، تخیل کی بلند پر و ا زی ا و ر تر تیب ا لفا ظ کا ا ستعما ل کر کے شا عر ی کے کنیو س میں ر نگ بھر تا ہے ۔ نجمہ عثما ن  کے ہا ں بھی ا س شا  عر ا نہ مصو ر ی کا خو ب ا ظہا ر ملتا ہے ۔ آ ئیے چند تصو یر یں د یکھیں ۔
ہو ا کے دکھ کی چا د ر ا و ڑ ھ لی  ہے               
بچھا کر آ نسو و ں کو سو رہی ہوں
ہے ا فق پر  تھکی تھکی سر خی               
 ر ا ت بھی جا گتی ر ہی ہو گی
تذ کر ہ تھا ز با ن  پہ بچپن کا                                
ا و ر مٹھی میں ا یک تتلی تھی
ز ند گی د کھو ں سے عبا ر ت ہے ۔  ہر شخص ا حتیا ج کا د کھ لئے پھر تا ہے ۔ جن لو گو ں کی ر فا قت کی تمنا ہو تی ہے ، وہ لو گ گر یز ا ں ر ہتے   ہیں ا و ر ہمیں ا ن لو گو ں میں جینا پٹر تا ہے جن کی ر فاقت  سو ہا ن ر و ح ہو تی ہے ۔ خو شیا ں ملتی ہیں تو  اتنی دیر سے کہ ا ن  کا و جو د ہی بے معنی ہو جا تا ہے۔  آ ر ز و  یئں لا محد و د ا و ر  ا ن کی تسکین کے ذ ر ا ئع  محد  و د ا و ر  بعض ا و قا ت تو تسکین آ ر ز و بھی تکلیف پر منتج ہو تی ہے ۔  نا کا م محبت ا لمیہ ہے ا و ر ا ز د و جی ر شتہ متعد د ا لمیو ں کا آ  غا ز ا لغر ض ہر حسا س ا نسا ن ا لمیو ں سے دو چا ر ہو تا ہے ا و ر شا عر تو و  یسے  بھی حسا س دل کا ما لک ہو تا ہے ۔  وہ نہ صر ف ا پنے دکھ کو محسو س کر تا ہے بلکہ د و سر وں کے ر نج و محن کو بھی لبِ ا ظہا ر کر تا ہے ۔ نجمہ عثما ن  نے ا پنے ا و ر  د و سر و ں کے دکھ کو ا سطر ح شعر و ں کے قا لب میں ڈ ھا لا ہے کہ ہر حسا س قا ر ی ا س دکھ کی ضر ب
ا پنے د ل پر محسو س کر تا ہے ۔
دوسر وں کے د کھ پہ ر و نے کو                                                       
کچھ ا لم مشتر ک بھی ہو تے ہیں
گر می با ر ش جا ڑ ا کو ئی مو سم ہو                                   
ز خم کی کھیتی ہر مو سم میں اُ گتی ہے
شا د ا بی نظر میں تھے  پت جھڑ کے سا ر ے ر نگ                                        
  لیکن و ہ ا یک ر نگ نظر سے عیا ں نہ تھا

ز ند گی مشینی ہوگئی ہے ا و ر آ ج  کا ا نسا ن د فتر ، کا لج ، فیکٹر ی ا و ر گھر کے گر د ا ب میں پھنس کر ر ہ گیا ہے ۔ ا د ا سی ، ا ضمحلا ل، پر یشا نی ، عز و قا ر کو قا ئم ر کھنے کی شد ید ا ذ یت ، محفلو ں میں تنہا ئی  کا ا حسا س ،  ر فا قتو  ں سے محر و می، ا حبا ب و ا قا رب کا تجا ر تی ر و یہ ، فر ا غت کا فقد ا ن  ،  خلو ص ا و ر مہر و مر و ت کا خلا آ ج کے ا نسا ن کا مقد ر بن چکا ہے ۔  ا کیسو یں صد ی کا ا نسا ن ز یا دہ با شعو ر ، زیا دہ خو د آ  گا ہ ا و ر
 زیا دہ با خبر ہو کر ا و ر ز یا دہ دکھی ہو گیا ہے  ۔ نجمہ عثما ن   نے ا پنی شا عر ی میں ان دکھو ں کا ا سطر ح ا حا طہ کیا ہے ۔
چھین لو مجھ سے خو ا ہشیں میر ی           
یہ سلُگتے عذ ا ب لے جاؤ
آ نکھو ں کی پٹ کھو لے یہ ٹو ٹی کھڑ کی                
 جا نے کس آ نے و ا لے کو تکتی ہے
وہ جو گلشن میں رہا کر تی تھی                        
  گھر میں ا ب خا ر چنا کر تی ہے
الغرض اُن کی معمولی باتیں بھی جب حُسنِ اظہار سے گذر کر آتی ہیں تو دلوں کو خوب لبھاتی ہیں۔ اُن کے کلام میں حُسنِ کلام کی باریکیوں اور اظہار کی نزاکتوں کا بیان  صاف نظر آتا ہے۔
میں تو بس چشم چشم پانی ہوں
وہ مگر اشک اشک شبنم ہے
بچھڑ کے تم سے یہ دل اور بے شجر ہو گا
جُدائی درد کے صحرا میں نوحہ گر ہو گی

بذریعہ فیس بک تبصرہ تحریر کریں

تبصرہ تحریر کریں۔

Your email address will not be published. Required fields are marked *